Oil & gas MD Adnan Khuwajha arrested in court



  • چیف جسٹس نے بر گیڈئیر امتیاز اور عدنان خواجہ گرفتار کرا دیے ،زردار ی پر"تلوار"لٹک گئی

    اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)قومی مصالحتی آرڈیننس این آر او کے تحت سزا معاف کرانے والے انٹیلی جنس بیورو کے سابق سربراہ بریگیڈیر (ر) امتیاز احمد اور انکے فرنٹ مین آئل اینڈ گیس ڈویلپمنٹ کارپوریشن کے برطرف ایم ڈی عدنان ایس خواجہ کو کمرہ عدالت سے گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ صدر مملکت آصف علی زرداری کے سوئس مقدمات پر بھی خطرے کی تلوار لٹک گئی ہے۔سپرین کورٹ نے سیکرتری قانون کو یہ مقدمات کھولنے کی غرض سے وزیراعظم کو خط لکھنے کیلئے 24ستمبر تک مہلت دیدی ہے۔قومی مصالحتی آرڈیننس پر عملدرآمد کے کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے بریگیڈیر (ر) امتیاز احمد اور عدنان خواجہ کو کمرہ عدالت میں حراست میں لینے کا حکم دیا جس پر عمل درآمد کرتے ہوئے نیب اور پولیس نے دونوں کو گرفتار کرکے اڈیالہ جیل منتقل کردیا۔یہ حکم سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے این آر او عمل درآمد کیس کی سماعت کے موقع پر دیے ۔ نیب حکام نے سپریم کورٹ کو بتایاکہ بریگیڈیئر امتیاز کو آٹھ سال قید کی سزا ہوئی تھی جن میں سے تین سال چھ ماہ اور سولہ دن کی سزا باقی ہے جبکہ انکی طرف سے ہائی کورٹ میں جمع کرائے گئے سیکیورٹی بانڈز کی مدت بھی ختم ہوچکی ہے۔ اسی طرح عدالت کو بتایا گیا کہ ان کو دو سال کی سزا ہوئی تھی لیکن ابھی ان کی دس ماہ اور سولہ دن کی سز اباقی ہے جبکہ انکی طرف سے ہائی کورٹ میں جمع کرائے گئے

    http://www.dailypak.com/index.php?pag=detail&id=11623



  • the news is a few hours old.