US Meddling in Balochistan Exposed by Zaheerul Hassan



  • On February 8, 2012, The United States (US) Congress Committee on Foreign Affairs while discussing situation of Balochistan opposed its emancipation but shown concern over security problem and killing of the people. In this meeting, a Republican Congressman Dana Rohrabacher, who recently co-authored an article with Congressman Louie Gohmert has expressed concern over Balochistan saying that it is an insurgency hit area. He said that this province has vital strategic importance.

    While addressing to media, foreign office spokesman Abdul Basit responded on February 8, 2012 and said Pakistan had conveyed its reservations to the US in Islamabad and Washington regarding the talks on Balochistan by the US Congress. In a question he also very rightly sent a clear message to Washington that "Pak-Iran gas pipeline project was not abandoned and it would be completed till 2014." Pakistan's ambassador to Washington Sherry Rehman raised the issue of an exclusive hearing on Balochistan by a House Foreign Affairs sub-committee in her meetings with the members of the Congress and senior officials of the US administration. Ms Rehman also stated that Islamabad strongly rejects the purpose and findings of the hearing and considers it an "ill-advised and ill-considered" move that will have serious repercussions for the bilateral relations. She also added that "Pakistan views this hearing with serious concern and considers it unacceptable in no uncertain terms. This kind of an exercise constitutes interference in Pakistan's internal affairs. The hearing will be detrimental to building mutual trust and confidence and will add to suspicions in Pakistan about the US motives in the region and concerning Pakistan,"

    http://www.zameer36.com/ViewArticle.asp?id=206



  • بلوچستان کا مسئلہ - اور امریکی موقف

    کانگریس میں ایک منتخب رکن کی طرف سے کوئی بھی بیان یا ایک بل پیش کرنا امریکی سرکاری پالیسی کو ظاہر نہيں کرتا ۔ کیا پاکستانی پارلیمنٹ کے ایک رکن کی طرف سے ہر بیان سرکاری پاکستانی پالیسی کی عکاسی کرتا ہے؟

    کانگریس اور سینیٹ کے منتخب ارکان کی طرف سے بیانات ان کے ذاتی خیالات اور رائے پر مبنی ہوتے ہيں اور کسی صورت ميں امریکی حکومت کے سرکاری موقف کی ترجمانی نہيں کرتے ۔ کسی صورت ميں کانگرس مين روھراباچر وائٹ ہاؤس یا امریکی حکومت کی سرکاری پوزیشن کی نمائندگی نہيں کرتا ۔ اس کے علاوہ، کانگریس کے معمول میں اس قسم کے کئی غیر ملکی معاملات اور موضوعات زیرسماعت آتے ہيں ۔ ان سماعتوں سے ضروری نہیں ہے کہ امریکی حکومت کسی ايک نقطہ نظر کی توثیق کرتی ہے۔ ميں دو ٹوک الفاظ ميں کہنا چاہتا ہوں، کہ امريکہ سنجید گی سے پاکستان کے اتحاد اور استحکام کی حمایت کرتا ہے اور یہ کہ بلوچستان کو پاکستان کے حصے کے طور پر قائم رکھنے کے لے خواہاں ہے۔

    اس کے علاوہ، امریکی انتظامیہ بلوچستان کے مسئلے پر ایک بہت واضح موقف رکھتی ہے ۔ بلاشبہ امریکی حکومت بلوچستان میں سنگین انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے کئی رپورٹس کے بارے میں کافی فکرمند ہےاورامريکی حکومت ان تمام سنگين انسانی حقوق کی خلاف ورزيوں کے ان الزامات کو کافی سنجیدگی سے ليتی ہے۔ ليکن امريکی انتظاميہ اس پربھی پختہ یقین رکھتی ہے کہ پاکستانی حکومت کی يہ بنیادی ذمہ داری ہے کہ ان مسائل کو تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ پرامن بات چیت کےذریعے حل کرنے کی ممکن کوشش کريں۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ ایک مضبوط، مستحکم اور متحد پاکستان امریکہ کے بہترین اسٹریٹجک مفاد میں ہے ۔

    ڈیجیٹل آؤٹ ریچ ٹیم، شعبہ امریکی وزارت خارجہ

    تاشفين

    ای میل : digitaloutreach@state.gov



  • @ tashfeen

    Nice post, good thing is that you reply in urdu and we blame you in english, this shows our double standard.

    I am agreed with you, we have to clean our house first.



  • Our doors are too widely open for any foreign intruders. Any foreign power has an easy access to our soil for playing games of global politics. Our neighbouring country Iran never let any foreign power play any political games on its soil.



  • یہ سر زمین پھر کسی بگتی کی تلاش میں ہے ... بگتی جیسا ولن روز روز نہیں پیدا ہوتا .. بگتی نے پاکستان کو ایک فائدہ دیا ہوا تھا... اس نے پاکستان مخالف مزاحمت کو بولچستان میں سر اٹھانے نہیں دیا ...



  • @HF: "Our doors are too widely open for any foreign intruders."

    And whose fault is that??