پاکستان میں نہ رہنے کی وجوہات



  • میں کیا جواب دوں ؟ ...چوراہا …حسن نثار

    قریباً ڈیڑھ دو گھنٹہ پر محیط اس دلچسپ اور درد ناک مباحثہ کے دوران میں نہ چاہتے ہوئے بھی نوجوانوں کو قائل کرنے کی کوشش کرتا رہا کہ وہ پاکستان میں ہی اپنا مستقبل تلاش کریں۔ نوجوان نسل کے ساتھ یہ مباحثہ اس بات پر ختم ہوا کہ وہ سب مل کر ”پاکستان میں نہ رہنے کی وجوہات“ کے عنوان سے کچھ لکھیں گے اور میں بھی اتنے ہی الفاظ میں اپنا جواب لکھوں گ

    نوجوان نسل نے حسب وعدہ ”پاکستان میں نہ رہنے کی وجوہات“ تحریراً مجھے بھجوا دی ہیں جو من و عن پیش خدمت ہیں لیکن پرابلم یہ کہ مجھے سمجھ نہیں آ رہی کہ میں سوائے خالی خولی کھوکھلی جذباتیت کے انہیں کیا جواب دوں سو آپ سب سے گزارش ہے کہ جواب دینے میں میری مدد فرمائیں۔ نوجوانوں نے تو ”پاکستان میں نہ رہنے کی وجوہات“ کے ڈھیر لگا دیئے ہیں اور جہاں تک تعلق ہے ”رہنے کی وجوہات“ کا تو مجھے سوائے اس کے کچھ سمجھ نہیں آ رہی ”یہ وطن ہمارا ہے ہم ہیں پاسباں اس کے“ یا ”مادر وطن“ کے نام پر جذباتی بلیک میلنگ کیا جواب دوں؟ پلیز مدد فرمایئے۔

    -1 فرد، معاشرہ، ریاست تینوں ناکام یعنی انفرادی و اجتماعی ناکامی کا شہکار۔

    -2 قانون شکن رویئے … اوپر سے نیچے یعنی پریذیڈنٹ سے پٹواری تک

    -3 کرپشن کی انتہاء جس سے کوئی محکمہ، شعبہ حتیٰ کہ عوام تک محفوظ نہیں۔

    -4 نمود و نمائش، اسراف

    -5 غیر اخلاقی رویئے۔

    -6 جھوٹ… افقی اور عمودی، دائیں سے بائیں لیڈر سے ووٹر تک جھوٹ

    -7 وعدہ خلافی … ٹاپ ٹو بوٹم

    -8 ملاوٹ اشیائے خورونوش سے دواؤں، ذاتوں، ڈگریوں تک میں ملاوٹ

    -9 سڑکوں سے لے کر پارکوں تک کوڑے کے ڈھیر اور دعویٰ یہ کہ ”صفائی نصف ایمان ہے“

    -10 بے لگام بڑھتی ہوئی مہنگائی اور دوسری طرف روپے کی قدر میں مسلسل کمی۔

    -11 ذخیرہ اندوزی اور چینی سے لے کر چوزے یعنی پولٹری تک پر سیاستدانوں کی مناپلی

    -12 دھوکا فریب … ہر ایک کا ہاتھ دوسرے کی جیب اور نظر دوسرے کے مال پر

    -13 میرٹ کی خلاف ورزیاں، پورا ملک ڈنڈی اور ڈنڈے کے زور پر چل رہا ہے۔

    -14 پابندیٴ وقت کا قتل حالانکہ نماز کے بنیادی اسباق میں سے ایک پابندی اوقات ہے -

    -15 اصول اور وضع داری کا بحران

    -16 بے ہنگم گائے بھینسوں پر مشتمل ٹریفک

    -17 قبضہ گروپ، لینڈ مافیا۔ اور تو اور سیاستدان اور سرکاری ادارے بھی اس میں ملوث ہیں

    -18 کام چوری۔ کتنے فیصد لوگ ہیں جو اپنی ذمہ داری احسن طور پر نبھاتے ہیں؟

    -19 طبقاتی نظام معاشرت

    -20 طبقاتی نظام تعلیم اور وہ بھی ایک دو نہیں، درجنوں قسم کا یعنی مختلف بلکہ ذہنی طور پر متصادم نسلوں کی تیاری

    -21 نام نہاد مذہبی اور قومی چھٹیاں حالانکہ اس حوالہ سے ایمرجنسی کا نفاذ ہونا چاہئے

    -22 جہالت اور جہالت زدہ انداز فکر

    -23 خوفناک فاقہ زدہ غربت۔ ایک طرف بھوک کی انتہاء دوسری طرف بدہضمی

    -24 تعلیمی، معاشرتی، سیاسی اجارہ داری۔

    -25 محنت اور مختلف کاموں سے جڑے حقارت آمیز رویئے، کام کرنے والے کو کمی کمین کہنے کا ذلیل رویہ

    -26 پاؤں کی بیڑیو ں جیسی برسیوں، چالیسووں اور شادیوں کی رسمیں اور مردود مہندیاں

    -27 قبر پرستی سے لے کر شخصیت پرستی تک کے غلیظ رویئے

    -28 اندھا تقلیدی رویہ اور ہر میدان میں آئین نو سے ڈرنا

    -29 سائنس اور ٹیکنالوجی یعنی حقیقی علوم سے دوری بلکہ دشمنی

    -30 ہر شعبہ حیات میں شارٹ کٹ کی تلاش

    -31 تشدد پسند رویئے، انتہاء پسندی، مذہب و ملک کے نام پر خود کو مسلط کرنا

    -32 دوسروں کی ذاتی زندگی میں بے جا مداخلت، پرائیویسی کا احترام نہ کرنا۔

    -33 بغیر وقت لئے کسی دوسرے کے گھر در آنا

    -34 دوسروں کی خوشیوں اور کامیابیوں پر حوصلہ شکن رویئے

    -35 ایثار اور قربانیوں کے جذبوں کا صرف حادثات اور آفات پر سامنے آنا

    -36 خوشامد کی انتہاء۔ کرنا اور کرانا

    -37 بے انتہاء عدم تحفظ یعنی نہ اقتصادی تحفظ نہ عدالتی تحفظ

    -38 بنیادی ضروریات زندگی کی عدم فراہمی مثلاً بجلی، گیس وغیرہ۔

    -39 پینے کا پانی بھی خریدنا پڑتا ہے اور وہ بھی اکثر مشکوک ہوتا ہے

    -40 چائیلڈ لیبر، کالی کاری خود ساختہ غیرت

    -41 وقت کی بے قدری

    -42 دولت اور غربت کو معیار بنا کر دوستیاں اور رشتے قائم اور ختم کرنا

    -43 لسانیت اور صوبائیت کے روگ سے فرقہ واریت کے ناسور تک

    -44 رشوت اور اس کی گھناؤنی شکلیں

    -45 ذاتی مفاد کو تمام مفادات پر ترجیح دینا

    -46 بے مقصد ہڑتالیں، جلوس، دھرنے، گھیراؤ احتجاج

    -47 ذاتی تقریبات کے لئے عام اور اہم شاہراہوں کو بند کرنا

    -48 غلط کار پارکنگ کا رویہ اور اس پر نادم تک نہ ہونا

    -49 قطار کا احترام نہ کرنا

    -50 مذہبی سوداگری

    -51 آمرانہ معاشرتی رویئے اور ڈبل سٹینڈرڈز

    -52 آبادی میں خوفناک اضافہ اور اس سلسلہ میں جاہلانہ اور مجرمانہ غفلت

    -53 عدم تعاون کا معاشرتی رویہ

    -54 عطائی موت کے سوداگر، عامل بابے، بنگالی جادوگر، کالے جادو، تعویذ گنڈے

    -55 جعلی ادویات کی خرید و فروخت -56 بقدر محنت معاوضے کا فقدان

    -57 سب سے بڑے کام ”ذہنی محنت“ کو کوئی کام نہ سمجھنا

    -58 قدم قدم پر مختلف قسم کی دہشت گردی

    -59 منافق ترین حکمران

    http://e.jang.com.pk/03-23-2012/Karachi/images/106.gif



  • اور جو اتنے لوگ رہ رہے ہیں، انکی وجوہات

    اور چونستھہ سال سے یہ ملک چلا جا رہا ہے، صومالیہ اور ایتھوپیا نہیں بنا، اسکی وجوہات

    اور زیادہ ہی قنوطی ہوگیا حسن نثار، اسکی وجہ



  • EasyGo Bahi,

    ye sare nojwano ke pakistan main na rehne ke wojohat haien. Khalatfahmi door kane ke liye main ne post me wo hisa bi dal diya he!



  • Leaving country is not necessarily a bad thing.

    Expats gain exposure and put their skills to work in the most advanced area of their fields. They send money back and earn a lot too. They can be a great asset to nation in future.



  • Tu Mohtaram Asif Bhai, aap ki itnee dil dahla dayna wali post ka lub-e-Lubab yeh hai kay jis din Imran Salahudin Ayubi nay Pakistan ki Khilafar sambha li, ushee din is mulk say bahar karooron Pakistani dok durjok wapis aa jain gai.....yehi mutlub tha na aap ka?



  • Siddiqi bahi,

    Ji han ayse hi ho ga aur parhe lighe Nojowan Agar Bahir se nahi bhi aye to kam as kam mulk se bahir jana chor dain gain aur apni salahitain apne mulk ke liye istimal karain gain.



  • Tu yaar seedhay seedhay bolo na.....itni lumbi aur mufaqiroon wali tamheed bandhnay ki kiya zaroorat hai.



  • حسن نثار جیسے منحوسوں کی پاکستان میں موجودگی 60۔



  • I am not always agreed with Hassan Nisar and have reservations regarding his Political inclinations and pessimistic approach.

    But these are all social evils and Problems present in our society and country.

    Political Parties should create their next manifesto around eliminating these (and maybe more) social evils .

    The first step towards "Solution" is 'Realization"



  • The first step towards "Solution" is 'Realization"

    Now read the opposit part of the story.

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=607794

    Taghliqi soch ka dusman - Ata ul Haq Qasmi



  • Let's charge sheet Pakistan!...ذراہٹ کے…یاسر پیر زادہ

    فی زمانہ سب سے آسان کام پاکستان کو گالی دینا ہے۔ وجہ اس کی بہت سادہ ہے ،پاکستان کو دی گئی گالی مارکیٹ میں بہت بکتی ہے ،اس حرکت کے رد عمل میں کوئی کسی کے خلاف پرچہ نہیں کٹاتا،کبھی کسی شخص نے محفل میں کسی دوسرے کا گریبان اس بات پر نہیں پکڑا کہ تم نے میرے ملک کو گالی کیوں دی؟ آپ نے کبھی یہ بھی نہیں سنا ہو گا کہ کسی نے پاکستان کے خلاف گالی سن کر غیرت میں آکر گالی بکنے والے کو قتل کر دیاہو،کوئی خود کش بمبار بھی اتنا غیرت مند نہیں ہوتا کہ ایسی گالی کے خلاف کہیں جا کر پھٹ مرے ۔اسی طرح پاکستان کو دی گئی گالی فیشن بھی سمجھی جاتی ہے کیونکہ بہرحال اس ملک میں خرابیاں تو بے شمار ہیں لہذا ان خرابیوں کو نئے رنگ ڈھنگ سے بیان کرنا ایک آرٹ ہے۔ اسکے برعکس کسی ایسے آدمی کو اس کی خامیاں گنوانے کی ہماری ہمت نہیں ہوتی جس کے ڈولے ہم سے زیادہ ہوں یا جس کے آگے سربسجود ہونے میں ہی ہماری عافیت ہو۔

    آج کل پاکستان میں کیڑے نقص نکالنے کا بیڑہ ہمارے نام نہاد نوجوانوں نے اٹھایا ہوا ہے جو اپنے تئیں بہت ٹیلنٹڈ ہیں اور جنہیں پاکستان میں صرف اس لئے کامیاب ہونے کا چانس نہیں ملتا کیونکہ یہاں لا قانونیت ہے ،رشوت ہے ،لوٹ مار ہے ،میرٹ نہیں ہے ۔یہاں صرف پیسے والے کا بول بالا ہے ،یہاں غریب کی کوئی عزت نہیں ،یہاں ایجنسیاں لوگوں کو اٹھا لے جاتی ہیں ،یہاں ملاوٹ ہے اوراخلاقی گراوٹ ہے۔یہاں چوری بھی ہے اور سینہ زوری بھی اور بھتہ خوری تو ایسی کہ جس کے خلاف بھتہ خوری کرنے والے بھی احتجاج پر مجبور ہو جائیں۔یہ نوجوان اٹھتے بیٹھتے یہی راگ الاپتے رہتے ہیں اورملک سے باہر جانے کے لئے بیتاب رہتے ہیں۔ انہیں پاکستان کے علاوہ کوئی بھی ملک قبول ہے اوروہاں ہر طرح کا ”گھٹیا“ کام کرنا بھی وارے میں ہے جبکہ یہاں انہیں ایسی ملازمت چاہئے جس میں صرف دو کام ہوں ،اول، حکم چلانا ،دوم،ا پہلی تاریخ کو تنخواہ لینا۔

    جن نوجوانوں کو ملک میں تمام برائیاں superlative formمیں دکھائی دیتی ہیں ان سے گذارش ہے کہ ایک مرتبہ وہی عینک لگا کر اپنی محبوبہ کو بھی دیکھیں جس عینک سے وہ اس ملک کو دیکھتے ہیں ،یقین کریں کہ دوسری مرتبہ دیکھنے کو دل نہیں کرے گا(محبوبہ کو)۔جس لڑکی پر یہ نوجوان فریفتہ ہوتے ہیں اس کیلئے یہ آسمان سے تارے بھی توڑ کر لا سکتے ہیں جبکہ ملک کیلئے ان کے منہ سے کلمہ خیر نہیں نکلتا۔ ان نوجوانوں کو اس ملک میں ایک بھی خوبی نظر نہیں آتی جبکہ اس لڑکی میں دنیا جہان کی خوبیاں نظر آتی ہیں جس کی شکل فاقہ زدہ ماڈل سے ملتی ہے ۔ایسے نوجوان جب اپنا سی وی بناتے ہیں تو اپنی ذات کی جملہ خوبیوں کو کچھ اس انداز میں بڑھا چڑھا کر بیان کرتے ہیں جن کے بارے میں ان کی والدہ ماجدہ کو بھی چنداں علم نہیں ہوتا۔ البتہ جہاں پاکستان کی بات آتی ہے وہاں یہ فارمولا الٹ جاتا ہے ،وہاں پاکستان کی ایک ایسی چارج شیٹ تیار کی جاتی ہے جو شائد اسرائیل یا بھارت بھی ہمارے خلاف تیار نہیں کر سکتے!

    پاکستان کے بارے میں ایسی چارج شیٹ پڑھنے کے بعدہمارے پاس کیا آپشن باقی رہ جاتے ہیں …شائد کچھ اس قسم کے…پہلا،اٹھارہ کروڑ عوام کوچاہئے کہ بحیرہ عرب میں چھلانگ لگا دیں ۔دوسرا،ملک چھوڑ کر باہر جا بسیں۔تیسرا،اسی ملک میں رہ کر اس کو گالیاں دیں اور اس کے سسٹم کا حصہ بن کر اس میں سے اپنا حصہ نکالیں ۔چوتھا،اس ملک میں رہ کر موجودہ نظام کی بہتری کے لئے کچھ ایسا کام کریں جس سے کم از کم یہ اطمینان ہو کہ ہم نے شکوہ ظلمت شب ہی نہیں کیا بلکہ اپنے حصے کا انرجی سیور بھی جلایاہے ۔پہلا آپشن تو قابل عمل نہیں ہے اس لئے فی الحال بحیرہ عر ب میں چھلانگ لگانے سے میری معذرت قبول فرمائیں ۔دوسرا آپشن خاصا پاپولر ہے تاہم جو لوگ پاکستان کی تمام تر برائیوں سے تنگ آکر باہر جا بسے ہیں ان سے دست بدستہ گذارش ہے کہ باہر سکونت اختیار کرنے کے بعد پاکستان جیسے گھٹیا ملک کی شہریت رکھنا آپ کے شایان شان نہیں لہذا اسے کوڑے کے ڈبے میں ڈال دیجئے ،ویسے بھی آپ یہاں کی گندگی سے تنگ آ کر باہر گئے تھے ۔پاکستان جیسے ملک میں پلاٹ خریدنا یا جائیداد بنانا بھی کچھ عجیب سا لگتا ہے ،یہ ملک تو (خاکم بدہن) ٹوٹنے کے قریب ہے اور اسی لئے آپ نے اپنے اور اپنے بچوں کے محفوظ مستقبل کی خاطر باہر سکونت اختیار کی ہے لہذا یہاں جائیداد بناناپرلے درجے کی حماقت ہوگی،یوں بھی یہاں قبضہ گروپ بھرے ہوئے ہیں ،آپ کی چارج شیٹ میں ان قبضہ گروپوں کا حوالہ بھی ہوتا ہے ۔یہاں ایک بات کی وضاحت ضروری ہے کہ باہر سیٹل ہونے والوں سے مجھے کوئی خاص اختلاف نہیں کیونکہ بہتر زندگی گذارنا ہر شخص کا بنیادی حق ہے ،مجھے شکایت صرف ان سے ہے جو پاکستان کے خلاف ہر برائی کو محدب عدسہ لگا کر دیکھتے ہیں بھلے وہ یہاں رہیں یا بیرون ملک۔

    تیسرا آپشن وہ ہے جو زیادہ تر لوگ استعمال کر رہے ہیں یعنی پاکستان میں رہ کر پاکستان کو گالی دینا اوراس سسٹم میں رہ کر اس نظام کی کمزوری سے فائدہ اٹھاناکہ زمانے میں جینے کا یہی ڈھنگ ہے۔چوتھا اور آخری آپشن سب سے مشکل ہے اور یہی وجہ ہے کہ یہ نوجوان ملک میں رہ کر نظام کی بہتری میں معاون ثابت ہونے کی بجائے اپنی تمام تر ناکامیوں کا جواز سسٹم کی خرابی میں تلاش کرکے بری الذمہ ہونا چاہتے ہیں۔مجھے آج تک کوئی ایسا نوجوان نہیں ملا جو حقیقتا بہت ٹیلنٹڈ ہو اور نوکری کی خاطر مارا مارا پھر رہا ہو،کمپنیاں تو ایسے لوگوں کی تلاش میں ہوتی ہیں،ٹیلنٹ کو تو سونے میں تولا جاتا ہے۔اگر کوئی ٹیلنٹڈ نوجوان یہ دعوی کرے کہ وہ اپنے شعبے کا ماہر ہے اور ویلا ہے ،ناقابل یقین بات ہے۔اس سرمایہ دارانہ نظام میں ہزار خرابیاں ہوں گی مگر ایک خوبی یہ ہے کہ cut throat competitionمیں اسے منہ مانگی قیمت ملتی ہے جس میں کچھ ہنر ہوتا ہے۔جس میں ٹیلنٹ ہوتا ہے وہ ٹاٹ سکول میں پڑھ کے بھی سیکریٹری یا جرنیل بن جاتا ہے، سٹیشن ماسٹر کا بیٹا سپریم کورٹ کا جج(جسٹس انوار الحق) بن جاتا ہے،سنٹرل ماڈل سکول کے ہیڈ ماسٹر کا بیٹا وزیر خزانہ (ڈاکٹر محبوب الحق) بن جاتا ہے اور دس ڈبل روٹیوں اور آٹھ درجن انڈوں سے کاروبار شروع کرنے والاکروڑ پتی بن جاتا ہے ۔

    جو نوجوان دن رات پاکستان میں برائیاں تلاش کرنے کا کاروبار کر رہے ہیں کیا انہوں نے کبھی ایک دفعہ بھی انتخابات میں ووٹ ڈالنے کی زحمت گوارا کی ؟ کیا انہوں نے اس ملک کا نظام درست کرنے میں اپنا کوئی حصہ ڈالا جو ملک انہیں سکالر شپ پر باہر پڑھنے کا موقع دیتا ہے،سبسڈائزڈ فیسوں پر ڈاکٹر ،انجینئر،وکیل بناتا ہے ،وہ ملک گالی کا مستحق ٹھہرا ،اس ملک کے بارے میں ہر منفی بات پھیلانا کار خیر ہوا …سبحان اللہ ۔انگریزی کا مقولہ ہے If you are not part of the solution, you are part of the problem!چنانچہ جو نوجوان مسئلے کے حل کا حصہ بننا چاہتے ہیں در حقیقت وہی پاکستان کا مستقبل ہیں،باقی سب ہیر پھیر ہے!

    http://jang.net/urdu/details.asp?nid=607676



  • is ko kisi achay se psycatrist ko check karao; agar pak main n ahin rahna chahta to aisay namonay ko kahin export kar do; lekin itna bara farm house is nahlay ko kon de ga; baqi sab cheezain mil jain geen;



  • A wide majority of immigrants, maybe more than 90%, leave Pakistan for "perceived" better economic opportunities. Usually belonging to not very well off families, they are under intense social pressure to contribute financially and feel that they can do it best by going abroad as getting rich in Pakistan is considered more difficult and time consuming.

    Once they start making good money, then many of them start finding justifications for staying abroad. But the issue is economic, all other "reasons" given for going or staying abroad are just a hogwash in most cases.



  • These comments shows that the noora league is wide from reality. This thread is not about the people going abroad on the basis of lies, for example asking for asylum in any western country. This thread is about the educated youngster who see no prospective for there future life in Pakistan and are force to leave there homeland to try a better life in a foreign country. These are the best brains and capital of the society. Other societies get profit from there qualities.





  • No one forces anyone to leave Pakistan. It is just the allure of making a quick buck that leads youngsters to immigrate, pure and simple.

    If anyone wants to sugar coat it in in the slogans of injustice, lawlessness blah blah blah, it is their choice. The fact is, the reason is money.

    And this is true not only for Pakistan but for all third world countries. People leave home for better financial prospects.



  • Now I understand why youth doesn’t support Sharif Family League. Instead of realizing the Problem they blame the youth. They think dividing the laptop would solve the Problem. I think the youth don’t care about the money. . The problems are much more complicated. They are looking for good opportunities and current Pakistan Govt. is failed to provide them these opportunities . So they are force to get these opportunities in other part of the world. Providing security, job opportunity, rule of law could perhaps solve the problems and young brains are ready to work for their country instead of going aboard.



  • Pakistanis started emigrating from 1960s during the hey days of industrial revolution when western countries started opening up their doors to foreign labors. This was further fueled by petrol boom in gulf in 1970s.

    Many more Indians, Bangladeshis and filipinos are living abroad than Pakistanis. I guess they also left their countries because of mis-rule by Zardari and Nawaz Sharif !!!



  • حسن نثار و آصف پینسٹھ والا@

    نوجوان نسل بالکل غیر ممالک جایں.لیکن وہاں سے انہی پٹواریوں اور سیاستدانوں کے لیے زرمبادلہ ضرور بھیجیں اور مندرجہ بالا فہرست کو مزید طوالت و تقویت دیں. کیا حکمران طبقہ یہی نہیں چاہتا؟ کیا خیال ہے فردوس عاشق اعوان نے اپنے گاؤں میں پاسپورٹ آفس کیوں کھلوایا ہے. یہ دفتر فردوس کو اتنا اہم تھا کہ اس کے لیے آپاں کو توتلی وزیرسے لڑنا بھی پڑا اور جب بات نہ بنی تو وزیراعظم کے وزرا سے بھرے اجلاس میں رونا بھی پڑا. جس کو ہم سب نے ٹی وی پر براہ راست ملاحضہ فرمایا.



  • But in last years the number of students and educated people leaving Pakistan increased very fast and every third Pakistani is wishing or looking for opportunity to leave Pakistan. If this situation not changed then soon there will be a bloody Ingilab and Sharif Family and Bhutto-Zardari will be also forced to leave Pakistan!!!