’توہین عدالت‘ چیف جسٹس کا شہباز شریف کے خلاف بناوٹی غصہ



  • Es khabar aur comments ko parh kar bazaher aisa lagta ha, keh, Chief justice sahab es taasar ko khatam karnay kee nakaam koshesh kar rahay thay, keh woh Noon league ka hasa ban chukay hein. Aur Noon league ko siyasi faida pochanay ke liay PPP ko aay din apnay judicial activism ke zarria target kar rahay hein.

    http://www.topstoryonline.com/chief-justice-criticises-punjab-govt

    اسلام آباد ( رؤف کلاسرا) سونیا ناز کیس کی سماعت کے دوران جمعہ کو چیف جسٹں آف پاکستان نے غالباً پہلی دفعہ وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے ’گڈ گورنس‘کے دعوؤں پر خاصی تنقید کی اور کہا کہ انہیں یاد رکھنا چاہیے کہ اگر وزیراعظم پاکستان یوسف رضا گیلانی کو عدالت میں طلب کیا جاسکتا ہے تو پھر انہیں بھی بلایا جا سکتا ہے۔ چیف جسٹں نے کیس کی کارروائی کے دوران متعدد بار پنجاب حکومت کے بلند و بانگ دعوؤں پر تنقید کی کہ وہ کس قسم کی گڈ گورنس کر رہے ہیں اور حیرانی سے متعدد بار پوچھتے رہے کہ اسے گڈ گورنس کہا جا سکتا ہے۔

    شہباز شریف اور ان کی حکومت کی کارگردگی اور عدالتی فیصلوں پر عمل نہ کرنے پر چیف جسٹں اس وقت برس پڑے جب کیس کی سماعت کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا کہ لاہور پولیس کے سربراہ احمد رضا طاہر ہیں۔ یہ سننا تھا کہ چیف جسٹں بول پڑے کہ یہ تو وہی پولیس افسر نہیں ہے جس کے خلاف گوجرہ میں ہونیو الے فسادات پر بننے والے عدالتی کمیشن نے کارروائی کی ہدایت کی تھی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ یہ تو کمال ہو گیا ہے کہ جس پولیس افسر کے خلاف ایکشن لینے کی سفارش کی گئی تھی اسے شہباز شریف نے اٹھا کر صوبائی دارالحکومت کا سربراہ مقرر کر دیا ہے۔ ’تو کیا یہ گڈ گورنس ہے ؟‘ چیف جسٹں نے سوال کیا۔

    اس پر چیف جسٹں نے ایڈیشنل ایدوکیٹ جنرل سے کہا کہ پھر آپ کے چیف منسٹر (شہباز شریف) کو ہی کیوں نہ بلوائیں۔ اگر وزیراعظم کو بلوا سکتے ہیں تو اسے کیوں نہیں۔ چیف نے کہا کہ آپ لوگ چاہتے ہیں کہ تیزاب کے بعد خودکشی کرنے والی فاخرہ کے بعد یہ حشر اب سونیا ناز کا بھی ہو۔

    چیف جسٹس نے یہ ریمارکس اس وقت دیے جب عدالت کے سامنے یہ انکشاف کیا گیا کہ ’سونیا ناز ریپ کیس‘ کے ایک مرکزی ملزم انسپکٹر جمشید چشتی کو لاہور پولیس کے سربراہ احمد رضا طاہر نے محکمانہ کارروائی کے لیے شو کاز نوٹس دیا تھا اور پھر اسے پرسنل ہیرنگ دے کر اس کیس کو داخل دفتر کر دیا تھا۔ یہ سن کر چیف جسٹس خاصے غصے میں آگئے اور کہا کہ بھلا ڈی آئی جی ظفر قریشی کی کی گئی انکوائر ی رپورٹ کے بعد کیسے احمد رضا طاہر اس کیس کو فائل کر سکتا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ظفر قریشی نے اتنی محنت کی تھی اور اتنا میٹریل اکٹھا کرنے کے بعد اپنی رپورٹ بنانی تھی اور آج عدالت کو بتایا جارہا ہے کہ لاہور پولیس کے سربراہ نے سب کچھ داخل دفتر کر دیا ہے اور موصوف کے خلاف عدالتی انکوائری کمیشن کی سفارشات کو بھی نظر انداز کر کے انہیں لاہور میں تعینات بھی کردیا گیا ہے۔

    چیف جسٹں نے کہا دراصل انہیں confront کرنے کے لیے احمد رضا طاہر کو لاہور پولیس کا سربراہ مقرر کیا گیا ہے کیونکہ اس کے خلاف ایکشن لینے کے لیے ہمارے ایک عدالتی کمیشن نے سفارش کی تھی۔ چیف جسٹں نے پنجاب کے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل کو کہا کہ وہ وزیراعلی شہباز شریف سے زرا پوچھیں کہ انہوں نے یہ کام کیوں کیا ہے؟ انہوں نے پوچھا کہ احمد رضا طاہر کو یہ اتھارٹی کس نے دی تھی کہ وہ جمشید چشتی کو شوکاز ایشو کر کے اور اسے ہیرنگ دینے کے بعد اس کیس کو داخل دفتر کر دے اور ملزمان کے خلاف کوئی کارروائی نہ کرے۔

    چیف جسٹں نے حیران ہوتے ہوئے اپنی بات دہرانی کہ ظفر قریشی کی رپورٹ میں پولیس کی وردیاں پہنے ملزمان کے خلاف اتنا کچھ مواد ہونے کے باوجود بھی احمد رضا طاہر نے ملزم انسپکٹر جمشید چشتی کے خلاف فائل بند کر دی ہے۔ چیف جسٹں نے پنجاب کے ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل کو کہا ’تو یہ ہے آپ کے صوبے کی گڈ گورنس ؟‘



  • Lol....sorry, Rauf Klasra type tatoo and boot polishers ain't worth didly squat..



  • in pak, judiciary takes credit of activism, in matured democracies, "judicial activism" is an accusation....

    see what obama said..

    Republicans accuse President Obama of trying to 'intimidate' the Supreme Court after he suggested a ruling by an 'unelected' body against his health care law would be 'judicial activism.'

    http://www.foxnews.com/politics/2012/04/03/republicans-slam-obama-over-warning-to-unelected-supreme-court/



  • in pak, judiciary takes credit of activism, in matured democracies, "judicial activism" is an accusation....

    see what obama said..

    Republicans accuse President Obama of trying to 'intimidate' the Supreme Court after he suggested a ruling by an 'unelected' body against his health care law would be 'judicial activism.'

    http://www.foxnews.com/politics/2012/04/03/republicans-slam-obama-over-warning-to-unelected-supreme-court/



  • siddiqi73@

    Noon league kee leadership aur Noon league ke propaganda cockroaches ke paas koi argument nein hoti. Esi liay unain gaaliyun, Naam baggaarnay aur dirty foul language use karnay ka sahara laina parta ha.


Log in to reply
 

Looks like your connection to Discuss was lost, please wait while we try to reconnect.