SAVE KARACHI TO SAVE PAKISTAN



  • Yes, we have to endeavor ourselves for how to save Karachi in order to save Pakistan. That should be the key issue of every single national debate.

    Since I'm from Karachi, so I know how I feel when it comes to Karachi's problems. I think all problems of Karachi are deeply embedded in the ocean of hatred created by money and power greedy elements of Pakistan.

    The fact is that such elements invested all their energies and resources in growing the problems instead of uprooting them. They have always used the most effective weapon of divide and rule in the name of religion, language, cast, bradri, subayiat, lissanyat etc. etc. to keep the nation divided.

    Now let's try to find out the remedy to such realities.

    You see, everybody knows his own household better and only he should be responsible to put it right. Can you imagine some Karachi Walas go to Lahore and tell Sharif Bradran what and how to do in Lahore, and that Lahoris should be ousted from every important jobs in Lahore and fill it up by Karachi boys with the intention that the city of Lahore becomes eventually a domain of Karachi walas? So what do you think how these two brothers are going to feel about it? Obviously not very good. Most probably they would say, and rightly so, that "Go to your Karachi, and leave us alone, we know how to run our Lahore by ourselves and we don't need your help." This is exactly the crime committed by Punjab's sons of soil against the rest of Pakistan. And this is the only problem causing all problems in Pakistan, specially in Karachi. Now it's not only Panjab, but also the sons of soil of Sindh too who have started to play this smart game in Karachi. Also the leaders of Pushtoons are trying hard to become stake holder of Karachi. They all are using Karachi for becoming a strong power and money stake holder. They believe Karachi is a gold mine. But it's so true that Karachi is indeed the key city to all Pakistan. But also this is true that Karachi cannot be run by anybody else than by Karachiates themselves. As long they do not achieve the right to rule their own city the city will never come to peace, and so won't Pakistan.

    Karachi walas did prove that there was no problem and no crime while they held their city into their own hands. So why can't they be allowed now? But we know it will not be allowed that easily again. But we also know that Karachi will remain totally paralyzed as long not allowed to be run by themselves, and with total powers. Or all Urdu speaking are killed. I think, in extreme case a civil war will decide the destiny of Karachi and of the rest of Pakistan. Intelligent people resolve their matters by themselves. Otherwise my enemy's enemy becomes my best friend. Is it really so difficult to understand all this???

    Mind you, I don't belong to MQM at all.

    Please comment as a true Pakistani only.

    Allah is my witness that I have written all this as a true, loyal and faithful Pakistani, and not as a Karachiate.

    Allah Pakistan ka nigehnan rahai. Amin



  • کراچی کو بچانا ہے تو ایم کیو ایم کے دہشت گردوں کو مٹانا ہے۔



  • Not possible for another 30-40 years.



  • Javed Sheikh Saheb

    It means we have to be ready to bear consequences which could mean a horrible destability with further frustration and anger ending up in horrible civil war?



  • pkpolitician Bhai

    I agree with you, but how to eliminate that terrorism and killing in Karachi? Have you got any recipe?



  • جے اے خان اور پی کے پولیٹیشن صاحب ۔

    یہ کام تو ہونے والا نہیں ۔ پچھلے پانچ سال سے پی پی برسراقتدار ہے اور ہر روز مفاہمت کی سیاست کے نام پر کم از کم 10 بندے مرتے ہیں ۔ آپ اکیلے ایم کیو ایم کو الزام نہیں دے سکتے ۔

    ہاں اگر آپ کراچی کی بدامنی کی وجوہات کی لسٹ بنائیں تو ٹاپ پر آپ کو ایم کیو ایم ہی نظر آئے گی ۔

    اب آپ جلدی سے اپنا بندوبست کریں کیونکہ روحیل تقی اور رضوان قائم خانی دو بوریاں لے کر چل پڑے ہیں ۔



  • SCheema Bhai

    Please don't frighten us. :)

    By the way, have you got any idea what to do?



  • Start with deweaponization!



  • Ziam Saheb

    I wish that could be done. But since it's not possible, what to do and what to think next???

    Thanks for commenting



  • خان صاحب ۔

    جتنے مرضی قانون بنا لیں جب تک نیت ٹھیک نہیں ہو گی اس وقت تک حالات بہتر نہیں ہوں گے ۔ آج تک آپ کو عظیم احمد طارق ، صلاح الدین ،حکیم سعید، مرتضیٰ بھٹو کے قاتلوں کا پتہ چل سکا ہے ۔

    ہمیں تو 12 مئی 2007 کو جو پچاس بندے مارے گئے تھے ان کے قاتلوں کا پتہ نہیں چل سکا اور جو بندہ (اقبال کاظمی) یہ کیس سندھ ہائی کورٹ میں لے کر گیا تھا اس کا کیا ہوا ؟

    اور ہاں ہمیں یہ بتایا گیا کہ سب سے بڑا ٹارگٹ کلر اجمل پہاڑی ہے لیکن اس کے بھی رہائی کے احکامات جاری ہو چکے ہیں ۔

    آپ نے حل پوچھا ہے صرف یہ ہے کہ سندھ کی برسراقتدار پارٹیاں جب تک اپنی نیت ٹھیک نہیں کریں گی وہاں کبھی سکون نہیں ہو گا ۔ کیونکہ یہ پارٹیاں چاہتی ہی نہیں کہ کراچی میں امن ہو ۔ اور ہاں ایک اور فریق بھی ہے یہ رینجرز 1994 سے کراچی میں تعینات ہیں ان کی کیا کارکردگی ہے ۔ دہرانے کی ضرورت نہیں ۔

    اب ذمہ داری کس کی ہے ۔ جو پارٹی حکومت میں ہے اس کی ذمہ داری ہے ۔



  • @SCheema

    چیمہ بھائی

    آپ کی بات درست ہے کہ اس وقت کراچی کی بد امنی کی ذمہ دار صرف ایم کیو ایم نہیں، پر اگر کراچی شہر میں بدامنی کرنے والوں کی لسٹ تیار کی جائے تو ایم کیو ایم ٹاپ پر نظر آتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کراچی میں اس وقت کئی گروہ بدامنی میںملوث ہیں، یہ گروہ بھتہ خوری کرتے ہیں، لوگوں کے فلیٹوں، پلاٹوں، جائیدادوں پر قبضہ کرتے ہیں، ٹارگٹ کلنگ، اسٹریٹ کرائمز، ڈاکہ سمیت کئی جرائم میں ملوث ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان میں ایم کیو ایم، اے این پی، پیپلز امن کمیٹی، ایم کیو ایم حقیقی، سنی تحریک، سپاہ صحانہ، سپاہ محمد اور اب تحریک طالبان پاکستان بھی یہاں پہنچ چکی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر فی الحال ایم کیو ایم ٹاپ پر ہے۔

    کراچی جو کہ ایم کیو ایم کے قیام سے قبل ایک پر امن شہر تھا لوگ راتوں کو آزادی سے گھومتے پھرتے تھے، آزادی سے اپنا کاروبار کرتے تھے، دیگر شہروں اور صوبوں سے لوگ آکر یہاں کروبار کرتے تھے نوکریاں تلاش کرتے تھے، آپس میں بے انتہا محبت تھی، مگر جب سے ایم کیو ایم کا قیام عمل میں آیا یہ غریب پرور شہر دہشت گردی کی آماجگاہ بنتا چلا گیا۔

    اگر سندھہ اور مرکز میں اگلی حکومت پیپلز پارٹی کی نہ بنی اور زرداری صاحب اپنی آئینی مدت پوری کرکے ایوان صدر سے چلے گئے تو اگلی حکومت سے توقع رکھی جاسکتی ہے کہ وہ کراچی شہر سمیت پورے ملک کو دہشت گردی سے نجات دلانے کی سنجیدہ کوشش کرے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‘ورنہ موجودہ الماس بوبی سے بھی بدتر حکومتی ٹولے سے سوائے ”مفاہمت، مفاہمت، مفاہمت“ کے کچھہ توقعی نہیں کی جاسکتی‘۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس جملے کو نصرت جاوید والے انداز میں پڑھا جائے۔

    @J.A Khan

    zia m said:

    Start with deweaponization!

    agreed with zia m



  • pkpolitician Bhai

    Though I got nothing to do with MQM and though I do agree with your points in this case to a great extent, yet I feel myself obliged to make few points in defense of MQM. Hopefully you are aware of Karachi's politics before MQM was not even conceived.

    Who brought this gun and heroin culture to Karachi, Jehadis or MQM? On purpose I have not mentioned the names of those religious political parties who I consider as the mother of all terrorism and gun culture. And those are the ones who are trying to portray themselves today as saints. And the majority of all those religious gangsters were not origionally from Karachi, nor were they Urdu speaking. They were the ones who had come from all over Pakistan to become Islamic Chaudhris of Karachi. Those were the ones who destroyed educational institutions by setting their youngsters with Klashnikof culture and by harassing women and everbody else who did not follow their rules. That and many other unbearable and disgusting situations were the main factors that gave birth to MQM as a matter of fact. What happened in all those Mrtial Laws and Bhutto era to Urdu speaking people in job sector of every nature is another dark side and deplorable reality of poor Karachi I'm not going to discuss at the moment. Can you remember how Ayob Khan and Z.A.Bhutto wanted to make sure that Mohajirs are to be sunk into Arabian See? Yes, that's how they discriminated and treated Urdu speaking of Karachi in all those years. These Istehsaali gangsters of Pakistan never liked anybody who they thought might talk their rights, or who they thought might open the the eyes of the sleeping nation. In a way they were right when it came to continue their Istehsaali Jageerdrana and Waderana Nizam-e-Hukumat. Yes, Urdu speaking were and still are a big danger to their Nizam.

    I remember when my very wise and highly respected and honored late father used to say that how this buch of idiots is destroying Pakistan. This he said in 1967-8. Then he said again in 1985 that look at these idiots who don't seem to have learned any lesson from mistakes that caused Bangladesh.

    Now you tell me my dear, pkpolitician, what would you do if your enemy is holding a Klashnikof in his hand and is not allowing you in the canteen or department of any university or college just because you are Urdu speaking? What would you do if Student Union Leader of any university or college is not allowing you to drink even a cup of tea in the canteen??? What would you do if your sisters are mistreating by such hooligans? Yes, all this caused MQM to take weapons into their hands. I remember how Mir Hazar Khan said in early 80s that "Mhajron ka bachcha bachcha marna hoga." Yes that kind of realities caused MQM, and that kind of realities forced MQM to sell jewelries and televisions just to buy gun in order not to be killed by barbars. Yes, that forced MQM to become a Bhatta Tanzeem.

    The stronger they became, the more enemies they got. The more enemies they got, the more Bhatta they needed to sustain against many horrible enemies. Now they want to defend and rule their city Karachi which is I think their good right. Also you wouldn't allow see somebody ruling your house, isn't it? And if Karachi should be for everybody, so should be Pakistan for everybody, isn't it? Tell me in all honesty if any Chaudhri or any Sharif Bradran will allow Altaf Husain to rule Lahore? Let's be only honest and realistic! This is what causing all problems in Karachi. Everybody wants to rule Karachi. And they all stand like a solid wall against MQM in order not to allow MQM to rule their own city. Facing this fact, I think, MQM decided to prove that this is the only way to get rid of this massive wall of horror.

    Now you or anybody else should tell me what MQM should do if faced and challenged against so many odds?

    Only one question to every Pakistani, that why the mafias of Pakistan are not allowing MQM to rule their own city their own way? If you love peace and harmony so much so why don't you look at those years of Musharraf time when MQM ruled Karachi single handed for so many years and so nicely. Was there any such problems and killings like we see today??? So why not now? The fact is that now there are many MQMs in Karachi. Only under different names. I think it requires the sincerity of military now to sort out this serious matter before Karachi is collapsed altogether. This I'm suggesting just because I have no trust in any kind of government of Pakistan any more. Only military can do it. Or be ready for serious consequences that could penetrate into whole Pakistan as well. That's why I said "Save Karaci to save Pakistan."

    university when in government and private job sector was the actu



  • جے اے خان بھائی

    میں کراچی کا رہائشی ہوں اور کراچی کی سیاست سے کسی حد تک واقف ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کی تفصیلی پوسٹ کا جواب جلد ہی پوسٹ کروں گا۔



  • pkpolitician Bhai Jee

    Also I'm from Karachi. And we have seen a lot in Karachi.

    Thanks



  • @J.A.Khan

    Brother nicely put, the whole story is really bitter but turth.

    Your post, reminded me the horible time of 1980s and stories what my parents and grand parent said about 60s and 70s.

    I hope our so called national leader will understand the issue and able distingush terrosim in karachi and people in karachi.



  • BitterTruth

    In those days I used to be in Karachi on regular basis.

    Some people might come to idea that I'm creating Tassub, but the fact is that my charity work is carried out in interior of Punjab, and not in Karachi. Though it made my younger sister very angry who was of the openion that more charity is needed for the children of Karachi. Whereby I was and still am that there is more deprivation in interior Punjab. and I did decide therefore to help those kids and families over there.

    I tell you BitterTruth, This is so unfair how they treat their own people in interior Punjab just like slaves, or perhaps worse than slaves. One day I was threatened by one of ..... of those ares for not to show my face over there and try not to bring any funny things (education) over there. They are the people of a very big political mafia.

    Anyway, let's stick to our Karachi issue only. Yes, it's so impoertant to high light all realities, and not only what and how MQM is. Even if MQM deserves to be defended for right things, so why we should not defend them. I don't care how people on this forum or anywhere else associate us with. To my knowledge, these days MQM does not need taking any more bhatta. Now they got many big people who are donating MQM. This Bhatta system is being used now by the people who are criminals and who have come from all over Pakistan. Also Bori-band bodies have become now their culture. It does not mean that MQM has become a saint. They might be doing the same in retaliation, or vis versa.

    This is really a crazy and vicious circle over there. I think the people of Karachi have to take this issue into their own hands before it all becomes out of hand. I think Karachi people should also contact MQM people on 90.



  • جے اے خان بھائی میں یہاں ممتاز صحافی رضوی صاحب کی تحریر یہاں پوسٹ کررہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔امید ہے اس کے بعد یہ بات کلیئر ہوجائے گی کہ ایم کیو ایم کو اردو بولنے والوں نے بنایا یا کسی اور نے اور ایم کیو ایم کو اردو بولنے والے کتنا پسند کرتے ہیں۔

    پاکستان بنانے میں ہندوستان کے ان علاقوں کے مسلمانوں نے زیادہ جوش و خروش سے حصہ لیا جنہیں سو فیصد یقین تھا کہ ان کے علاقے پاکستان کا حصہ کسی صورت نہیں بننے والے، ان مسلمانوں نے پاکستان بننے سے پہلے اور بعد میں بھی سب سے زیادہ قربانیاں دیں۔ مسلم اکثریتی علاقے تو صبح اٹھے اور پاکستان بن چکا تھا۔

    ہندوستان میں ہندوؤں اور سکھوں نے ان مسلمانوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑنا شروع کردئے، ان مسلمانوں کا جرم یہ تھا کہ یہ مسلمان تھے اور پاکستان کے پرزور حمایتی تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہندوؤں اور سکھوں کے ظلم و ستم کے باعث مسلمان پاکستان کی جانب ہجرت کرنے لگے۔ لیکن جلد ہی لیاقت علی خان نے مغربی پاکستان کی سرحدیں بند کرنے کا اعلان کردیا کہ جو جہاں ہے وہ وہیں رہے۔

    (اگر یہ تاریخی بات غلط ہے تو کوئی ممبر یہاں اس کی تردید کرکے اصل بات شیئر کرسکتا ہے)۔

    اردو بولنے والے مہاجروں کی ایک بہت بڑی تعداد نے مشرقی پاکستان کی جانب بھی ہجرت کی۔

    اردو بولنے والوں نے بنگلہ دیش کی مخالفت میں پاکستانی فوج جسے اس وقت ”پنجابی آرمی“ کہا جانے لگا تھا کی بھرپور حمایت کی۔ فرض کریں اگر اردو بولنے والے مہاجر اس وقت ”دھرتی کے بنگالی بیٹوں“ کے ساتھہ ہوجاتے جنہوں نے اردو بولنے والوں کو خوش آمدید کہا تھا تو کیا ہوتا، شاید پاکستان آرمی جسے اس وقت ”پنجابی آرمی“ کہا جانے لگا تھا اور پنجابی اس وقت ایک گالی بن چکا تھا مشرقی پاکستان میں، شاید پاکستانی فوج کو کہیں پناہ نہ ملتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اردو بولنے والوں نے اسلام اور پاکستان کی محبت میں پاکستانی فوج کا بھرپور ساتھہ دیا۔

    مغربی پاکستان ہجرت کرنے والے اردو بولنے والے مہاجر پورے پاکستان میں آباد ہوئے خواہ وہ لاہور ہو، فیصل آباد ہو، حیدر آباد ہو، میر پور خاص ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔البتہ جس طرح پشاور سے زیادہ پٹھان کراچی میں آباد ہیں، لاکھوں پنجابی کراچی میں آباد ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کراچی کے پورٹ سٹی، تجارتی سٹی، کاروبار و ملازمت کی وجہ سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اردو اسپیکنگ بھی کاروبار و ملازمت کی وجہ سے یہاں آگئے، تب کراچی دارلخلافہ بھی تھا اور سرکاری آسامیاں بھی خالی تھیں۔

    سقوط ڈھاکہ سے قبل اور بعد بھی اردو بولنے والے مہاجروں کا انخلاء ہوا، صاحب حیثیت لوگ بزریعہ ہوائی جہاز، اور کچھہ بزریعہ شپ کراچی آگئے اور بہت سے لوگ براستہ بھارت۔نیپال۔پاکستان آئے وہ ایک الگ ہی داستان ہے۔

    اردو اسپیکنگ لوگوں کی طرح پٹھان اور پنجابی بھی ملازمت اور کاروبار کے لئے کراچی آگئے۔

    اب آتے ہیں ایم کیو ایم کی تخلیق کی طرف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ سراسر غلط ہے کہ ایم کیو ایم کی تخلیق میں اردو بولنے والوں کا ہاتھہ تھا، بلکہ کراچی کے باشندوں کو ایم کیو ایم جیسی تنظیم کا تحفہ ایک ڈکٹیٹر جنرل ضیاء الحق اور آئی ایس آئی نے دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(ہمارے جے اے خان بھائی اب بھی روز روز چلا چلا کر فوج کو پکارتے رہتے ہیں، اس کی وجہ شاید یہ ہے کہ جے اے کان بھائی بھی ایم کیو ایم کی محبت میں گرفتار ہیں اور ہماری آرمی بھی)۔

    ایم کیو ایم سے قبل 8 سال تک اے پی ایم ایس او (الطاف گروپ) قائم رہی اور اس نے کبھی بھی کسی ایک کالج میں بھی الیکشن نہیں جیتا، گویا اپنی فری ول کے تحت کراچی کے باشندوں نے الطاف حسین کی تنظیم کو رجیکٹ کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واضح رہے کہ ”کراچی سینٹرل“ (لالو کھیت) پاکستان کا وہ واحد ڈسٹرٹ تھا /ہے جہاں اردو بولنے والوں کی بھاری اکثریت ہے جہاں لٹریسی ریٹ تقریبا” سو فیصد تھا اور جہاں سے پاکستان کی ہر قومی تحریک کا آغاز ہوا کرتا تھا (ایم کیو ایم) بھی یہیں سے بنائی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ وہی لالو کھیت ہے جس کے بارے میں ایک شاعر نے 1977 میں کہا تھا:

    **نہ امریکہ کے گوروں سے نہ افریقہ کے کالوں سے

    سبق جمہوریت کا سیکھہ لالو کھیت والوں سے

    **

    پاکستان توڑنے کی سازش میں شریک جنریلوں کی ہی نسل میں سے ایک جرنیل ضیاء الحق جو اس وقت پاکستان کا حکمران تھا نے کراچی کی اسی خصوصی اہمیت کو ختم کرنے اور یہاں اسلامی/قومی رنگ کو ختم کرنے کے لئے آئی ایس آئی کے ذریعے ایم کیو ایم کی بنیاد ڈالی۔

    اس وقت سندھہ کے وزیر اعلٰی غوث علی شاہ تھے (جو آج کل مسلم لیگ ن سندھہ کے صوبائی صدر ہیں)، یہ آج بھی گواہی دیتے ہیں کہ ایم کیو ایم جنرل ضیاء نے ان کے ہاتھوں سے آئی ایس آئی کی پلاننگ سے بنوائی اور اردو بولنے والے مہاجروں کو یہ لالچ دیا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔1۔ڈھائی لاکھہ بہاریوں کو پاکستان لایا جائے گا، 2۔صرف صوبہ سندھہ میں رائج کوٹہ سسٹم جو مہاجروں کے خلاف بھٹو نے بنوایا تھا وہ ختم کروایا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ دو نعرے آج تک نعرے ہی ہیں۔

    ایم کیو ایم کی تشکیل میں سندھی قوم پرست جئے سندھہ/جی ایم سید نے بھی بھرپور مدد کی تاکہ اردو بولنے والوں کی مدد سے سندھو دیش کے ناپاک خواب کو تعبیر مل سکے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔موصوف اپنے اس ناپاک خواب کی تعبیر میں ناکام رہے۔

    ایم کیو ایم کو اسلحہ اے این پی کے پٹھانوں نے دیا، شیلٹر آئی ایس آئی ( جس کے بارے میں اس وقت مشہور تھا کہ اکثریت پنجابیوں کی ہے)، اس طرح ایم کیو ایم کا تحفہ کراچی کو خصوصا” مہاجروں کو دیا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جن اردو بولنے والوں نے مسلح ایم کیو ایم کی مخالفت کی انہیں راستے سے ہمیشہ کے لئے ہٹا دیا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔50000 مہاجر نوجوان قتل کئے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حکیم سعید، سید صلاح الدین سمیت نمایاں اردو بولنے والوں کی قتل کردیا گیا۔

    آج بھی کراچی میں صاف شفاف انتخابات کرواکر دیکھہ لئے جائیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایم کیو ایم کو سندھہ اور وفاقی حکومت سے الگ کرکے، پولنگ بوتھس میں آرمی کو تعینات کردیا جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پتا لگ جائے گا کہ ایم کیو ایم کتنے پانی میں ہے اور اردو بولنے والوں کی کیا سوچ ہے۔

    **آج کا کراچی

    **

    قیام پاکستان کے وقت کراچی پاکستان کا دارلخلافہ تھا،لیکن جلد ہی مخصوص مقاصد کے لئے اسلام آباد منتقل کردیا گیا اور کراچی کو حاصل وفاق کی گرانٹ ختم ہوگئیں۔

    قیام پاکستان کے وقت کراچی کوئی بہت زیادہ ترقی یافتہ شہر نہیں تھا۔ دارلخلافہ کی اسلام آباد منتقلی کے بعد یہ شہر مزید قحط الرجال کا شکار ہوگیا۔ اس شہر کا مختصر سا جغرافیہ تھا، اور اس شہر کے ”اصل اور مستقل“ باشندے قدیم بستیوں میں آباد تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاؤن ٹاؤن صدر تا ٹاور پر منحصر تھا جہاں کچھہ تجارتی سرگرمیاں ہوتی تھیں۔

    آج کا ترقی یافتہ کراچی حقیقتا” یہاں باہر سے آنے والوں پر مستمل ہے۔۔۔۔۔۔۔۔سب سے پہلے اردو بولنے والے ہندوستان سے ہجرت کرکے یہاں آئے، ان میں ایک بڑی تعداد وائٹ کالر جاب کرنے والے بابو ٹائپ لوگ تھے، لہذا انہوں نے اسی قسم کے کام اسٹارٹ کئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے بعد صوبہ سرحد یا خیبر پختنخواہ سے پٹھانوں نے یہاں کا رخ کیا، ان میں سے بیشتر مزدور طبقہ کے لوگ تھے، ان پٹھانوں نے کراچی شہر کی تعمیر و ترقی میں بھرپور حصہ ڈالا بیشتر نے ہر قسم کے چھوٹے موٹے کاموں کو سنبھالا جب کہ پیسے والے پٹھانوں نے ٹرانسپورٹ سیکٹر کو سنبھال لیا اور دیکھتے ہی دیکھتے پورے کراچی کی ٹرانسپورٹ پر چھا گئے۔

    تیسرے نمبر پر یہاں پڑھے لکھے تاجر پیشہ پنجابی حضرات آئے۔۔۔۔۔ان مین پنجابی سوداگران دہلی شامل ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہت سے پنجابیوں کو تو یہ شہر اتنا بھایا کہ وہ مستقلا” یہاں آباد ہوگئے اور واپسی کا راستہ بھول گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ان کے پیدا ہونے والے بچے اپنی مادری زبان بھی بھول گئے اور ان گھرانوں میں اردو بولی جانے لگی، ان لوگوں نے کراچی کے اردو بولنے والے گھرانوں میں شادیاں بھی کیں۔

    چوتھے نمبر پر یہاں بھٹو کے برسر اقتدار آنے کے بعد یہاں سندھی بھائی بھی کثیر تعداد میں آگئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قبل ازیں کراچی میں سندھیوں کی تعداد آٹے مین نمک کے برابر تھی اور وہ اپنے گوٹھہ سے باہر جانا پردیس جانا تصور کرتے تھے،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سقوط ڈھاکہ کے بعد اردو بولنے والے بہاری بھی یہاں آئے، انہوں نے یہاں آتے ہی بغیر کسی سرکاری امداد کے کراچی کی ترقی بالخصوص تعلیمی ترقی میں حصہ ڈالا۔

    1971 میں کئی بنگالی بھائی بنگلہ دیش بننے کے بعد بنگلہ دیش چلے گئے۔

    1981 میں روس کے افغانستان میں مداخلت کے بعد کئی پٹھان بھائی کراچی میں انٹر ہوئے اور وہ روایتی طور پر اپنے ساتھہ اسلحہ اور ہیروئن لائے، اس تجارت میں بھی انہوں نے خوب کمایا اور کراچی کی ترقی میں انڈائیرکٹلی حصہ ڈالا۔

    لہذا اگر عقل و انصاف سے دیکھا جائے تو آج پاکستان کا سب سے بڑا شہر کراچی جو پاکستان کا سب سے زیادہ ترقی یافتہ شہر بھی ہے۔۔۔۔ اور پاکستان کو سب سے زیادہ ریونیو دینے والا شہر بھی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ سب کچھہ ان لوگوں نے کیا جو بیشتر باہر سے آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خواہ وہ اردو بولنے والے ہوں، پنجابی ہوں، پٹھا ہوں یا سندھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ان سب کی آمد کی وجہ سے یہاں کے پرانے قدیم باشندے بھی اپ گریڈ اور اپ لفٹ بھی ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (ہمارے جے اے خان بھائی کی باتوں سے لگتا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ اردو بولنے والوں کے سوا سب کو نکال دیا جائے کیوں کہ وہ سب یہاں کے اصل باشندے نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر پٹھانوں، پنجابیوں، سرائیکیوں کو صرف اس لئے نکال دیا جائے کیوں کہ وہ یہاں کے اصل باشندے نہیں تو یہی اصول کیا پھر اردو بولنے والوں پر اپلائی نہیں ہونا چاہیئے کیوں کہ وہ بھی یہاں کے اصل باشندے نہیں؟ اگر پٹھانوں، پنجابیوں اور سرائیکیوں کو نکال دیا جائے تو کراچی کراچی نہیں رہ پائے گا)

    کراچی میں دولت کی فراوانی دیکھہ کر جرائم پیشہ عناصر کے منھہ میں بھی پانی بھر آیا اور بھی اس کیک میں اپنا حصہ لینے آگئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے یہاں انفرادی جرائم ہونے لگے لوگوں کی جیبیں کٹنے لگیں، چوری چکاری میں اضافہ ہونے لگا، غنڈے بدمعاش سرکاری زمینوں پر قبضے کرنے لگے، جنرل ضیاء کے دور میں ایسے ہی مہاجر گروپ کی سرپرستی کی گئی تو ایم کیو ایم بن گئی تو مہاجر پٹھان فساد شروع ہوگئے، پھر مہاجر اور پنجابی فساد شروع ہوگئے، جس کے بعد ایم کیو ایم کے مقابلے میں پی پی آئی (پنجابی پختون اتحاد) وجود میں آیا، ان دونوں کی قیادتوں کو یہ فساد خوب راس آیا اور کراچی کی نئی آبادی ان فسادوں سے پناہ لینے کے لئے اپنے اپنے لسانی گروپوں میں پناہ ڈھونڈنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واضح رہے جب کراچی میں فسادات ہوتے تھے تو دونوں قیادتیں ایک ہی پلیٹ میں کھانا کھایا کرتی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یعنی تقسیم کرو عوام کو اور خود حکومت کرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(اگر آج بھی دیکھا جائے تو کراچی میں تین لسانی گروپ ہیں ایم کیو ایم، اے این پی اور امن کمیٹی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایم کیو ایم اور اے این پی آج بھی زرداری کے اتحادی ہیں اور یہ تینوں ایک ہی پلیٹ میں کھانا کھاتے ہیں اپنے اپنے علاقوں میں مہاجر، پٹھان اور سندھی بلوچوں سے ہی سب سے زیادہ بھتہ لیتے ہیں انہیں کی زمینوں اور جائیدادوں پر قبضہ کرتے ہین اور انہی کی نمائندگی کے دعوے دار بنے بیٹھے ہیں)

    **کراچی میں اسلحہ اور ہیروئن

    **

    اس کی تجارت سے بلیک منی کا ایک سیلاب آیا کراچی میں۔ اس بلیک منی نے بھی کراچی کی تعمیر و ترقی میں بھرپور حصہ ڈالا۔۔۔۔۔اس سے بڑے بڑے پلازہ بنے، ہاؤسنگ سوسائٹی بنیں، کچھہ ٹرانسپورٹ انڈسٹری کی طرف بھی یہ سرمایہ منتقل ہوا۔۔۔۔۔۔۔کالے دھن کا یہ حصہ بھی انڈائیریکٹلی کراچی کی تعمیر و ترقی کا حصہ دار بنا۔

    ہیروئن کی اصل مارکیٹ یو ایس اے اور یورپ تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔افغانستان میں بننے تیار ہونے والی ہیروئن جس کا خام مال اور مشینری بھی امریکہ اور یورپی ممالک فراہم کرتے تھے، کو افغانی/پاکستانی پٹھانوں کے ایک گروہ نے یہاں اسٹاک کیا اور یہاں سے برآمد کیا۔۔۔۔۔۔کراچی کا سوراب گوٹھہ ہیروئن کی زخیرہ اندوزی کا ایک بہت بڑا مرکز بن گیا۔۔۔۔۔۔۔۔جس کی حفاظت کے لئے یہاں اسلحہ کا ایک بہت بڑا ذخیرہ جمع کیا گیا، یہ سوراب گوٹھہ کی کچی آبادی خالصتا” افگانی/پاکستان پٹھانوں کی آبادی تھی اور عوامی شیلٹر کی غرض سے یہاں بھی پشاور کی ترز پر ایک باڑا مارکیٹ قائم کی گئی۔

    جنرل ضیاء حکومت نے ایک حکمت عملی کے تحت اس کاروبار کو غیر اعلانیہ شیلٹر فراہم کیا، ہیروئن کی اصل منزل امریکہ اور یورپ تھی جہاں سے اس کے بدلے میں اسمگلرز کے ذریعے پاکستان کو کثیر تعداد میں زرمبادلہ مل رہا تھا، ٹٹ فار ٹیٹ۔۔۔۔۔۔کہ یہی ممالک اپنے پاکستانی ایجنٹس کے ذریعے پاکستان کی دولت یہاں سے باہر لے جاکر پاکستان کو عالمی ساہوکاروں کا مقروج بنایا کرتے تھے۔

    تاہم ہیروئن پاکستانی سرزمین سے ٹرانسپورٹ ہونے اور کراچی میں اسٹاک ہونے کے سبب ایک قلیل مقدار یہاں بھی چوری چھپے سپلائی ہونے لگی اور چھوٹے جرائم پیشہ عناصر اسے بھی چوری چھپے سپلائی کرنے لگے، جس سے کراچی کی برگر کلاس خاصی متاثر ہوئی۔۔۔۔۔جب عالمی پیمانے پر ہیروئن کے اس مرکز کے خلاف آوازیں بلند ہوئیں تو مجبورا” اس مرکز کے خلاف آپریشن کرنا پڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تب وزیر اعلٰی سندھہ ضیاء الحق کے چہیتے غوث علی شاہ تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ وہ واحد وزیر اعلٰی تھے جو وزیر اعلٰی پہلے ممبر صوبائی اسمبلی بعد میں بنے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انہوں نے بھی ہیروئن سے خاصا کمایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس وقت کے گورنر سرحد نے بھی اس ہیروئن سے اتنا کمایا کہ ان کا نام بھی امیر ترین افراد کی لسٹ میں آنے لگا۔

    سہراب کوٹھہ ہیروئن مرکز کے خلاف آپریشن کلین اپ کے بعد ہیروئن کا یہ مرکز اجڑ گیا اور یہاں لایا گیا اسلحہ فروخت کیا جانے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس اسلحہ کو سب نے خریدا مگر سب سے زیادہ ایم کیو ایم نے خریدا اور اپنے مسلحہ ونگ کو مضبوط کیا۔

    یہ ہیروئن اور اسلحہ کے سائڈ افیکٹس میں سے اہم سائڈ افیکٹس تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    ایم کیو ایم نے آئی ایس آئی اور اسلحہ کے زور پر کراچی شہر کو بالعموم اور اردو بولنے والوں کو بالخصوص یرغمال بنالیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پولنگ بھوتس پر قبضہ کرکے بیلٹ سے بھی اپنی مرضی کے نتائج نکلوا کر ایم این اے اور ایم پی ایز کے بل بوتے پر مرکزی اور صوبائی حکومت میں شامل ہوگئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یوں ایم کیو ایم ایک ایسی کڑوی حقیقت بن گئی جسے کراچی والے نہ نگل سکتے ہیں نہ اگل سکتے ہیں۔

    .

    .

    .

    .

    .

    .

    جاری ہے



  • جاری ہے

    **کوٹہ سسٹم اور ایم کیو ایم

    **

    نام نہاد عوامی لیڈر ڈولفقار علی بھٹو نے چاروں صوبوں میں سے صرف صوبہ سندھہ میں دیہی اور شہری سندھہ کی تقسیم کرتے ہوئے سرکاری ملازمتوں، پشہ ور تعلیمی اداروں، اور ترقیاتی بجٹ میں کوٹہ کی بنیاد ڈال کر تین بڑے شہروں کراچی ، حیدرآباد اور سکھر جہاں اردو بولنے والوں کی اکثریت تھی کے لئے غالبا” 20 فیصد کوٹہ مقرر کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔20 سال کے لئے۔

    ایم کیو ایم کے خالق نے جی ایم سید کی خواہش پر 20 سال بعد خود بخود ختم ہوجانے والے کوٹہ کو مزید 20 سال تک توسیع دے دی۔۔۔۔۔۔۔۔شہروں میں مقیم ہر سندھی کے پاس دہرا ڈومیسائل ہوا کرتا ہے ایک اس کے آبائی شہر اور ایک وہ جہاں وہ رہ رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    جنرل ضیاء کے دور میں 30 لاکھہ سے زیادہ افغانی صرف کراچی میں آکر آباد ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر انہوں نے بنگلہ دیش میں محصور ڈھائی لاکھہ پاکستانیوں کو یہاں لانے سے انکار کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو پاکستان کی محبت میں پاکستانی فوج کو سپورٹ کرنے کی وجہ سے آج بھی بنگلہ دیش میں محصور ہیں۔

    ان تمام حقائق کے باوجود جب ایم کیو ایم کراچی، حیدر آباد میں برسر اقتدار آئی سندھہ اور وفاقی حکومتوں کا حصہ بنی تو انہوں نے اس کوٹہ سسٹم کے خلاف آواز اٹھانے سے انکار کردیا اور نہ ہی ڈھائی لاکھہ بہاریوں کی کوئی بات کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب کہ اس مد میں آج بھی ڈھائی لاکھہ کا فنڈ معتمر اسلامی کے پاس موجود ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب کہ جماعت اسلامی کی یہ آفر اب بھی موجود ہے کہ حکومت صرف اجازت دے ہم اپنے خرچے پر محصور پاکستانیوں کو بنگلہ دیش سے پاکستان لاتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مہاجروں کی ہمدرد ایم کیو ایم ہے یا جماعت اسلامی۔



  • یہ ایک حقیقت ہے کہ بہاریوں کے لئے ایم کیو ایم نے کوئی آواز بلند نہیں کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جماعت اسلامی کے علاوہ اگر بہاریوں کی کسی نے بات کی ہے تو وہ نواز شریف نے کی۔



  • "Not possible for another 30-40 years"

    not until we have jageerdar/wadaira secular saamraaj


Log in to reply
 

Looks like your connection to Discuss was lost, please wait while we try to reconnect.