Bhutto stands alone



  • Recently saw this old footage....can't believe that pakistan produced a leader like this....all other leaders look like dwarfs in front of him.....can anyone imagine anyother pakistani leader speaking like this.

    http://www.youtube.com/watch?v=GXCR9xqgV4M





  • Bad Luck to Pakistan started where a brilliant leader, ever produced in Pakistan after Mr. Mohammad Ali Jinnah, was killed by the Group of Stupid.

    Had the Establishment of Pakistan ducked away the American pressure in 1977, Pakistan could have been at a much better position, today.

    اب خدا جانے ، بے چارے پاکستانی ، اور کتنے عرصے تک

    گنا چوپیں گے

    ganna chooping and chooping and chooping.



  • This is best thread to put Nishan-e-Taliban, Bo-Bakra-e-Taliban, BAWA, at the road.

    5 mg of Bhutto, is a simple doze to enjoy Talibani Dance.



  • The only two leaders that had guts to talk to a foreign leader on an equal footing were Butto and Benazir.....both were eliminated by right wing establishment......our future generations will remember 1977 as the starting point of the fall of pakistan....there was a chance that Benazir can repair the damage but she was taken out as well.



  • there was a chance that Benazir can repair the damage but she was taken out as well.

    Hahahah, you are so funny, she was busy making money along with her Mr 10% husband. Pakistani future generation will celebrate the day of her death as start of the end for a corrupt family.



  • As the Whole of the Pakistani nation stands on one side and bhutto on the other side, so INDEED Bhutto stands alone. ;-)

    FJ



  • میں خود مردود خاندان کا بہت بڑا قصیدہ خواں ہوں لیکن

    ایک بات کی مجھے ابھی تک خود سمجھ نہیں آ سکی ہے کہ جب میں مردود خاندان کی قصیدہ خوانی کرتا ہوں تو کوڑھیوں کے پچھواڑوں پر کھرک کیوں شروع ہو جاتی ہے اور وہ اپنے منہ کالے کیے اور پچھواڑے کھرک کھرک کر لہو لہان کرتے اور چیخیں مارتے کیوں باہر نکل آتے ہیں؟؟؟؟؟؟

    آخر کیوں ان سے میری قصیدہ خوانی برداشت نہیں ہوتی ہے؟؟؟؟؟؟؟

    **

    سالے کوڑھی خود مردود خاندان کی قصیدہ خوانی کریں تو ٹھیک - میں کروں تو کریکٹر ڈھیلا ہے**

    **:) :)

    **

    مجھے تو ویسے بھی اقتدار کی ہڈی کی ہوس میں ملک دو لخت کرنے والے مردود بھٹو، ایرانی کلب ڈانسر زوجہ مردود اور اپنے چور خاوند کی مدد سے قوم کی دولت لوٹ کر سوئس بنک بھرنے کے بعد کنپٹی پر گولی کھا کر کتے کی موت مرنے والی دختر مردود کی قصیدہ خوانی کا جنوں کی حد تک شوق ہے



  • جذباتی بھائی - السلام و علیکم اور عید مبارک



  • I sometimes feel if Bhutto was not murdered, he'd ended up a ruler like Saud or Assad. He will rule for life and get 99% vote in each elections and all his opponents would end up in jail and there was a web of intelligence through out the country.

    Awam may or may not be any more wealthy but Bhutto had become an icon of anti-imperialism or anti-US or whatever.. like Robert Mugabe or that Sudani president.

    Sheer Emotionalism...



  • کوئی کوڑھی بے شک مردود بھٹو کی جتنی مرضی دم اٹھاتا رہے لیکن حقیقت یہی ہے کہ **بھٹو کی سیاسی زندگی کا آغاز بھی جرنیلوں کے ہاتھوں ہوا تھا اور انجام بھی جرنیلوں کے ہی ہاتھوں ہوا ہے

    **

    بھٹو وہ بدنصیب شخص تھا جس کی سیاسی زندگی کا آغاز بیوی کے تعلقات استعمال کرکے جرنیلوں تک پہنچنے جیسی ذلت و رسوائی سے ہوا اور انجام و اختتام بھی عبرتناک موت اور ذلت و رسوائی پر ہوا. اس کے پجاری اسے بہت عظیم سیاستداں قرار دیتے ہیں لیکن وہ کتنا عظیم آدمی تھا؟

    **

    آئیے میں حقائق کی روشنی میں بتاتا ہوں

    **

    بھٹو اقتدار کا بھوکا شخص تھا اور وہ ہر قیمت پر اور جلد از جلد حاصل کرنا چاہتا تھا. ابتدا سے ہی اسکا کا مطمع نظر صرف اور صرف اقتدار کا حصول تھا اور اسے حاصل کرنے کے لیے وہ خوشامد کی کسی بھی انتہا تک جا سکتا تھا. ایسے ہی اقتدار کے بھوکے لوگوں کے بارے میں ضیاء الحق نے کہا تھا کہ "میں ان کو اقتدار کی ہڈی دکھاؤں تو یہ دم ہلاتے ہلاتے میرے پیچھے پیچھے چلنا شروع ہو جائیں گے اور اسوقت تک چلتے رہیں گے جب تک ہڈی مرے ہاتھ میں ہوگی". اقتدار کے پہلے زینے پر قدم رکھنے کے لیے اس نے اپنی بیوی کے سکندر مرزا کی بیوی سے تعلقات کا فایدہ اٹھایا اور اسے استعمال کرتے ہوئے سکندر مرزا کی قربت حاصل کی. اسکندر مرزا کی خوشامد میں اس حد تک گر گیا کہ اسے تاریخ میں قائد اعظم سے اونچے مقام پر فائز کر دیا. پھر اسکندر مرزا کی معرفت جنرل ایوب خان تک پہنچا اور اسے قصیدہ خوانی کرکے اور ڈیڈی بنا کر وزارت حاصل کی. یوں بھٹو نے فوجی آمروں کے تحت اپنی سیاسی زندگی کا آغاز کیا. ایوب خان سے اسکی وفاداری کی انتہا یہ تھی کہ وہ نہ صرف مادر ملت فاطمہ جناح کے خلاف ایوب خان کی انتخابی مہم کا انچارج بنا بلکہ اسکا چیف پولنگ ایجنٹ بنا بھی. اس نے یوں خان کی طرف سے مخالف سیاستدانوں کو خریدنے کے لیے بھاری رقوم بھی تقسیم کیں. جب ایوب خان کی دی ہوئی وزارت کی ہڈی چھوٹی لگنے لگی تو بری ہڈی کی ہوس میں بھٹو نے اسی ڈیڈی کی ٹانگیں کھیچنا شروع کر دیں

    انیس سو ستر کے انتخابات میں بری طرح شکست کھانے کے بعد جب اقتدار کی ہڈی کا حصول ممکن نہ رہا اور اپوزیشن میں بیٹھنا پڑا تو نئے ڈیڈی جنرل یحییٰ خان کی گود میں جا بیٹھا اور اسے ورغلا کر شیخ مجیب الرحمان کو اقتدار کی منتقلی میں رکاوٹ بن گیا اور "ادھر تم ادھر ہم"، "دو پارلیمنٹ دو وزیر اعظم" اور "جو ڈھاکہ پارلیمنٹ کے اجلاس میں شرکت کے لیے جائے گا اسکی ٹانگیں توڑ دی جائیں گی"، جیسے نعرے بلند کرنے لگا. یہ وہی شخص ہے جس نے مشرقی پاکستان میں ملٹری آپریشن پر کہا تھا کہ "خدا کا شکر ہے کہ پاکستان بچا لیا گیا ہے" حالانکہ سب جانتے تھے کہ ملٹری آپریشن متحدہ پاکستان کے تابوت میں آخری کیل تھا. آخر کار اقتدار کا بھوکا یہ شخص پولینڈ کی قرارداد پھاڑ کر ملک توڑنے اور اقتدار حاصل کرنے میں کامیاب ہوگیا

    اقتدار میں آ کر اس نے اپنی جمہوریت پسندی کا پہلا ثبوت بلوچستان کی حکومت اور اسمبلی توڑ کر گورنر راج نافذ کرکے دیا. اسکے بعد بھٹو نے اپنے مخالفوں اور سیاستدانوں پر ظلم و ستم کا وہ بازار گرم کیا کہ زمین کانپ اٹھی. اپنے اقتدار کی طوالت کے لیے اور لوگوں کی آواز دبائے کے لیے ایف اس ایس اور نتھ فورس بنائی گئی. مردوں کی تو بات ہی چھوڑیں خواتین تک کو معاف نہیں گیا گیا اور حبیب جالب جیسے ترقی پسند شاعر بھی کہہ اٹھے کہ

    قصر شاہی سے یہ حکم صادر ہوا

    لاڑکانے چلو. ورنہ تھانے چلو

    بھٹو نے اقتدار کی ہڈی منہ میں دبائے رکھنے کی خاطر اس نے ستتر کے انتخابات میں ریکارڈ دھاندلی کی اور پھر اس دھاندلی پر اعتجاج کرنے والے پانچ چھے سو لوگوں کو نہ صرف گولیوں سے بھون دیا بلکہ اپنا اقتدار اور تسلط قایم رکھنے کی خاطر ملک کے تین بڑے شہروں میں مارشل لا نافذ کرکے فوج کو عوام پر ٹینک چڑھانے کا حکم دیا. فوج جب دیکھتی ہے کہ اقتدار کے بھوکے سیاستدان عوام کا ووٹ لیکر عوام سے کٹ گئے ہیں اور اپنی عیاشیوں اور لوٹ مار کی وجہ سے انہوں نے عوام کا جینا دوبھر کر دیا ہے تو پھر فوج وہی کرتی ہے جو اس نے بھٹو کے ساتھ کیا. بھٹو نے جس فوجی جرنیل کو یہ سمکھکر آرمی چیف بنایا تھا کہ وہ اسکی ہر ناجائز بات پر لبیک کہے گا اسی نے گلے میں پھندا ڈال کر اسے عبرتناک انجام تک پہنچا دیا

    یوں مردود بھٹو کی جس سیاسی زندگی کا آغاز بیوی کے جرنیلوں سے تعلقات کے استعمال کرنے جیسی ذلت و رسوائی سے ہوا تھا. اسکا انجام بھی جرنیل کے ہاتھوں جسے اپنے اقتدار کو طول دینے کی خاطر پانچ سینیئر جرنیلوں کو پس پشت ڈال کر آرمی چیف بنایا تھا، عبرتناک موت اور ذلت و رسوائی پر ہوا

    .

    .



  • almas bobeyon say iltamaas hay keh eid kay din apnay pir zialuhaq kay mazar par do nafal parhain.

    the body of marde momin marde haq was shredded into one million pieces but to construct a mazar they collected bones from hawaldar saleem-maseeh lance naik allah-ditta and air hostess shagufta nasreen and created the body of zialulhaq.....the only thing that belonged to zia was his teeth....but don't be afraid when you go to zialhuq's mazar, he wont bite

    hahahahahah



  • Bhutto was the greatest of all politicians ever emerged in Pakistan.

    All other former and current politicians look like Choohas of Dualey Shah.

    End of the Story.



  • الماس بوبیوں کی خاص نشانی یہ ہوتی ہے کہ وہ الماس بوبی کی زبان (نہ اردو نہ انگریزی) میں ہی بات کرتے ہیں

    .

    .



  • @Bawa,

    Sorry but you are wrong at many places in your last post.

    You mentioned "loot maar"..Bhutto was never involved in corruption. Even Prof. Ghafoor marhoom , the opposition leader, said that.

    Secondly, you quoted Zia calling Bhutto a khushaamdi. Since Zia has died, I wont call him names but Zia was 10 times more khushaamdi than Bhutto. There are numerous incidents about that..in one such incident Zia (when was a brig. or something) waited for a whole day outside of Bhutto's residential area because he "thought" Bhutto has asked him to. I cant remember the name of the book or the article where this whole incident is reported.

    Thirdly, Bhutto emerged at the time when the political landscape was dominated by jurnails and there was no democratic traditions in the country. About using his personal contacts to network with powerful people, there is nothing wrong or out of ordinary there, infact it is a norm.



  • مجھے بھٹو مردود کی اوقات دکھانے پر مجبور نہ کریں ورنہ آپ اور سب کوڑھی فورم والوں کو منہ دکھانے کے قابل نہیں رہیں گے

    سب دنیا جانتی ہے کہ مردود بھٹو ، اسکے وارثوں اور پی پی پی کی ساری تاریخ خود غرضی، مفاد پرستی، دھوکہ دہی، غداری، ملت فروشی، لوٹ مار اور منافقت سے بھری ہوئی ہے. جیسے جیسے لوگوں کا معیار تعلیم اور سیاسی سوجھ بوجھ بلند ہوگی ویسے ویسے لوگ بھٹو خاندان کے کرتوتوں سے واقف ہوتے جائیں گے

    **

    بھٹو کے اس قوم پر اتنے “احسانات” ہیں کہ اسے صرف ایک مرتبہ پھانسی پر چڑھا کر نہیں بھلایا جا سکتا. ان “احسانات” کو چکانے کے لیے اسے بار بار پھانسی دینے کی ضرورت ہے تاکہ آیندہ کوئی ایسی ملک فروشی والی حرکتیں نہ کر سکے

    **

    بھٹو نے مادر ملت فاطمہ جناح کو الیکشن ہرانے کے لیے ایوب خان کی طرف سے سیاسی پارٹیوں کو بھاری رقوم تقسیم کیں اور ایوب خان کا چیف پولنگ ایجنٹ بنا

    اقتدار کی ہوس میں ملک توڑا اور اقتدار مجیب الرحمان کو منتقل نہ ہونے دیا اور ادھر تم ادھر ہم اور جو اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے لیے ڈھاکہ جائے گا اسکی ٹانگیں طور دی جائیں گی جیسے بیانات بھٹو جیسے “جمہوریت پسند” کو ہی زیب دیتے تھے

    بھٹو نے پاکستانی کی سیاست میں وراثت کا آغاز کیا جس نے جمہوریت کو مذاق بنا کر رکھ دیا

    بھٹو نے چن چن کر اپنے سیاسی مخالفین کو قتل کروایا جن میں نمایاں نام ڈاکٹر نذیر احمد، خواجہ رفیق، عبدالصمد اچکزئی، چودھری محمد اقبال اور مولانا شمس الدین کے ہیں

    بھٹو نے اپنے مخالفین پر بے پناہ جسمانی اور جنسی تشدد کیا. سیاسی مخالفوں اور صحافیوں کی آنکھوں کے سامنے ان کی چیختی چلاتی بہن بیٹی یا بیوی پر تشدد کے پہاڑ توڑے اور ان سے پہلے سے تیار شدہ اقبالی بیان پر دستخط لیے۔ مشہور صحافی شورش کاشمیری کو بھی اسی قسم کی دھمکی دی گئی تھی. میاں طفیل محمد کے ساتھ کیا گیا سلوک کون بھول سکتا ہے. حنیف رامے جیسے شریف النفس لوگوں کو جیل میں تشدد کا نشانہ بنایا. پی این اے کے سیکریٹری جنرل رفیق باجوہ کو بھی اسی بیٹیوں کو اغوا کرنے کی دھمکی دے کر بلیک مل کیا گیا

    بھٹو کے ساتھی لڑکیاں اغوا کرکے گورنر ہاوسز میں لے جاتے تھے. جاوید ہاشمی نے لاہور کے گورنر ہاؤس سے لڑکیاں برآمد کروانے کے لیے گورنر ہاؤس کا گھیراو کیا اور پھر وہ اغوا شدہ لڑکیاں جمرود سے برآمد ہوئیں

    بدنام زمانہ قلعہ اٹک، بدنام زمانہ ایف ایس ایف اور بد نام زمانہ نتھ فورس بھٹو کے دور کی عظیم تحفے ہیں

    ہم یہاں بھٹو کے کن کن "عظیم کارناموں" کا ذکر کرکے ورق سیاہ کریں؟

    **

    قدرت نے بھٹو اور اسکے خاندان کو نشان عبرت بنا دیا تاکہ لوگ اسکے انجام سے سبق حاصل کر سکیں

    **



  • Even after 30-40 years of his death, Bhutto is still being followed and discussed at each and every social and polticial Forum.

    کیا بات ہے ، کیا بات ہے ، کیا بات ہے



  • صرف کوڑھیوں کی حد تک

    :) :)

    .



  • bhutto was a controversial leader but he was the smartest man pakistan saw in decades.....none is trying to make him acceptable to all hundred percent pakistanis...he had supporters and he had opponents....this was politics....but i challenge you all to name one politician who has the charisma like bhutto.....who is able to impress foreign leaders like butto....who has god given speaking powers to connect to ordinary and poor people like butto...... his iq level was more than everyone else combined.

    yahan log urdu mein lambay choray bhasahn likh rahay hain...yeh konsa software ya computer shumputer hay jo english ko unrdu mein translate kar daita hai



  • @ Bawa Ji

    پیرو مرشد

    اسلام اعلیکم

    آپ کو اور آپ کے اہل خانہ کو بہت بہت عید مبارک ..

    یہ گھاسی رام المعروف پیر کھوتے شاہ کے عقیدت مند پھر شروع ہوگے ہیں ، لگتا ہے آپ کے ہاتھوں پرانی چھترول بھول گے ہیں .. حیرانی کی بات ہے کہ جس صاحب نے یہ تھریڈ شروع کیا ہے وو خود اقرار کر رہا ہے کہ یہ گھسا پٹا کلپ اس نے پہلی بار دیکھا ہے ..

    اس عقل اور علم کے اندھے کو یہ نہیں پتا کہ جنگ بندی کی پولینڈ کی یہ قرار داد منظور ہوجاتی تو مشرقی پاکستان میں فوری جنگ بندی ہوجاتی اور جنرل نیازی کی ہتھیار ڈلانے کی نوبت نہ آتی .. گھاسی رام المعروف پیر کھوتے شاہ کی کم عقلی اور اقتدار کی حوس نے اس کو یہ قرارا داد پھاڑ کر جیب میں ڈالنے پر مجبور کیا

    اور یہ جاوید شیخ صاحب سے ہم نے ایک علمی سوال اس تھریڈ پر پوچھا تھا جس میں یہ پاکستان کی تخلیق کے مطلق اپنے خیالات کا اظہار کر رہے تھے ، آج تک یہ لاجواب ہیں ، امید ہے پولینڈ کی جنگ بندی کی قرار داد پھاڑنے سے مطلق گھاسی رام المعروف پیر کھوتے شاہ کی تاریخی غلطی کا جواب بھی اوپر والوں میں سے کوئی صاحب نہیں دے سکے گا