’پاکستان گولن کے تحت چلائے جانے والے ادارے بند کرے‘



  • پاکستان میں ترکی کے سفیر نے توقع ظاہر کی ہے کہ پاکستان امریکہ میں خود ساختہ جلاوطنی کاٹنے والے مبلغ فتح اللہ گولن کے تحت چلائے جانے والے تمام اداروں کو بند کرے گا۔
    ترک حکام فوجی بغاوت کی ناکام کوشش کا الزام فتح اللہ گولن پر دیتے ہیں۔
    سرکاری خبر رساں ایجنسی اے پی پی کے مطابق ترکی کے سفیر صادق بابر نے ترکی میں ہونے والی پیش رفت پر میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ انقرہ نے دوست ممالک سے درخواست کی ہے کہ وہ اپنے ممالک میں گولن گروپ کی سرگرمیوں کو روکیں۔
    بغاوت کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ترک حکومت کے پاس ٹھوس شواہد ہیں کہ فوجی بغاوت کی ناکام کوشش کے پیچھے گولن تحریک تھی۔
    واضح رہے کہ پاکستان میں گولن کے زیر انتظام پاک ترک سکول چل رہے ہیں۔
    ترک سفیر نے کہا کہ پاکستان میں گولن کے تحت چلائے جانے والے اداروں کے حوالے سے ترک حکومت پاکستانی حکام کے ساتھ رابطے میں ہے اور پاکستان کے ساتھ ہر شعبے میں ہمارے اچھے تعلقات ہیں۔
    ترک سفیر نے مغرب کے دوہرے معیار پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جس روز ترک پارلیمنٹ نے ملک میں ایمرجنسی نافذ کرنے کا فیصلہ کیا اسی روز فرانس میں عائد ایمرجنسی کی مدت میں اضافہ کیا گیا لیکن وہ ترکی کے اقدام پر تنقید کر رہا ہے۔

    http://www.bbc.com/urdu/pakistan/2016/07/160723_turkey_envoy_golen_schools_pakistan_rh



  • Should he not mind his own business?

    کیا پی ایم پاکستان اس سے ذاتی دوستی نبھاتے ہوئے 'پاک ٹرک' سکول بند کر دیں گے؟



  • ایک کام کرسکتا ہے پاکستان - وہ یہ کہ گولین اسکول بیکن ہاؤس کو بیچ دے - دوسری صورت میں مولانا سمی ال حق تو خوشی خوشی اسکو لے لینگے - لیکن ایسا کرنا اتنا آسان بھی نہیں - جو گولین کے اصل مالک ہیں انہوں نے ایک بھاری رقم اجازاتنامے حاصل کرنے کے لئے دی ہو گی اور اس سے بھی زیادہ اسکول کی عمارت بنانے پی خرچ کی ہو گی - ایک سول کیس بنےگا , سٹے آرڈر ملیگا اور کیس بیس تیس سال چلےگا - ترکی بھی خوش اور گولین بھائی بھی خوش - اسی کو سیاست کہتے ہیں