Poetry Link... (For Tired minds and Souls)



  • Saza Daita Hai

    Jane kis cheez ki wo mujhko saza deta hai,

    meri hansti huyi aankhon ko rula deta hai,

    Kis tarah baat likhun dil ki usse, wo aksar,

    doston ko mere khat padh ke suna deta hai,

    Saamne rakh ke nigaahon ke wo tasveer meri,

    apne kamre ke charaaghon ko bhuja deta hai,

    Muddaton se to khabar bhi nahi bheji usne,

    uski aadat hai wo apno ko bhula deta hai…

    Wasi Shah [once again :-D ]



  • Baat Din Ki Nahi, Ab Raat Se Dar Lagta Hai,

    Ghar Hai Kacha Mera, Barsaat Se Dar Lagta Hai,

    Tere Tohfay Ne To Bas Khoon Ke Aansoo Hi Diye,

    Zindagi Ab Teri Saugaat Se Dar Lagta Hai,

    Pyaar Ko Chor Ker Tum Aur Koi Baat Karo,

    Ab Mujhay Pyaar Ki Har Baat Se Dar Lagta Hai,

    Meri Khaatir Na Wo Bandnaam Kahein Ho Jaein,

    Iss Liye Unn Ki Mulaqaat Se Dar Lagta Hai....!!!



  • Daraaz Palken, Ghizaal Aankhen

    Musawwari Ka Kamal Aankhen,

    Sharab RAB Ne Haram Kar Di,

    Magr Hain Rakhi Halal Aankhen,

    Hzaron In Se Qitaal Hongey,

    Khuda K Banday Sambhal Aankhen.



  • Ajab Tanasub Se Zehen-o-Dil Mein

    Khayal Taqseem Ho Rahe Hyn

    Mujhy Mohabbat Si Ho Gai Hy

    Tumhein Mohabbat Sikha Sika k …



  • Roz-o-shab yun na azziat mein guzaray hotay,

    chain aa jata agar khail kay haaray hotay,

    khud say fursat hi muyassir nahi ayi warna,

    ham kisi aur kay hotay to tumharay hotay,

    tujh ko bhi gham nay agar theek se barta hota,

    teray chehray pay bhi khadd-o-khawl hamare hotay,

    ek bhi mauj agar meri himayat karti,

    mene us paar kayi log utaray hotay,

    lag gayi aur kahin umr ki poonji warna,

    zindagi ham teri dehleez pay haaray hotay,

    kharch ho jatay isi ek mohabbat mein Mohsin,

    Dil agar aur bhi seenay mein hamaray hotay



  • یہاں پر ایک ساعت کی حماقت مار دیتی ہے

    محبت کے سفر میں ثالثی سے بچ کے رہنا تم

    کہ اس راہِ محبت میں شراکت مار دیتی ہے

    ...

    غلط ہے یہ گماں تیرا کوئی تجھ پر فدا ہو گا

    کسی پر کون مرتا ہے ضرورت مار دیتی ہے

    ہمارے ساتھ چلنا ہے تو منزل تک چلو ہم دم

    ادھورے راستوں کی یہ رفاقت مار دیتی ہے

    میں حق پر ہوں مگر میری گواہی کون دیتا ہے

    کہ دنیا کی عدالت میں صداقت مار دیتی ہے

    سرِ محفل جو بولوں تو زمانے کو کھٹکتا ہوں

    رہوں میں‌چُپ تو اندر کی بغاوت مار دیتی ہے

    رہوں گھر میں تو مجھ پر طنز کرتا ہے ضمیر اپنا

    اگر سڑکوں پہ نکلوں تو حکومت مار دیتی ہے

    نہیں تھے پر بہت کچھ تھے ہم اپنی خوش گمانی

    فسانوں میں جیئیں لیکن حقیقت مار دیتی ہے

    کسی کی بے نیازی پر زمانہ جان دیتا ہے

    کسی کو چاہے جانے کی یہ حسرت مار دیتی ہے

    سرِ بازار ہر اک شے مجھے انمول لگتی ہے

    اگر میں بھاؤ پوچھون بھی تو قیمت مار دیتی ہے

    زمانے سے اُلجھنا بھی نہیں اچھا مگر علی

    یہاں حد سے زیادہ بھی شرافت مار دیتی ہے